گرما گرم خبریں

پولیس پٹرولنگ پولیس ٹھاکرہ موڑ چوکی نے مختلف کاروائیوں میں چھ مقدمات درج
تحریک انصاف میں شمولیت پر راجہ حسیب کیانی کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں،رضوان ہاشمی
نیشنل ہائی وے اینڈ موٹر وے پولیس سیکٹر نارتھ ٹو کی سالانہ ایوارڈ تقریب کا انعقاد
کمپیوٹرائزڈ لینڈریکارڈ سنٹر گوجرخان عوام کیلئے دردسر بن گیا
نیا پاکستان بنانے کیلئے پرعزم ہیں،چوہدری جاوید کوثر ایڈووکیٹ
ضلع چکوال کی سیاست میں آنے والے چند دنوں میں بڑی سیاسی تبدیلیاں رونما ہورہی ہیں
چوہدری زاہد جٹ نے اپنی برادری سمیت تحریک انصاف میں شامل ہونے کا اعلان کردیا

صحافتی شعبہ میں اگر تعلیم یافتہ اور عامل صحافی ایمانداری سے کام کریں تو توملک مزید ترقی کی طرف گامزن ہوگا۔ملک ابرار احمد


راولپنڈی(پریس ریلیز)پاکستان مسلم لیگ(ن)کے راہنما و رکن قومی اسمبلی ملک ابرار احمد نے کہا ہے کہ ترقی یافتہ ممالک میں نوجوانوں کی صلاحیتوں کو فروغ دیا جاتا ہے جبکہ ہمارے ملک کے اندر صحافت سمیت تمام شعبوں میں پڑھے لکھے اور با صلاحیت لوگوں کو نظر انداز کیا جاتا ہے۔موجودہ حکومت نے نوجوان نسل کی بہتری کے لئے تعلیم عام کرنے کو ترجیح دی ہے۔صحافتی شعبہ میں اگر تعلیم یافتہ اور عامل صحافی ایمانداری سے کام کریں گے توملک مزید ترقی کی طرف گامزن ہوگا۔ان خیالات کا اظہار ایم این اے ملک ابرار احمد نے گذشتہ روزراولپنڈی میں ینگ جرنلسٹ ایسو سی ایشن کی تقریب حلف برداری کے موقع پر شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔اس موقع پر چکلالہ کینٹ بورڈ کے نائب صدر راجہ عرفان امتیاز،راولپنڈی اور چکلالہ کنٹونمنٹ بورڈ کے ممبران ارشد محمود قریشی،رشید احمد خان،ملک منصور افسر،ملک ساجد ،یوسف گل،چوہدری خرم صدیق،محمد جمیل،ملک عثمان،الحاج خالد بٹ،ینگ جرنلسٹ ایسوسی ایشن کے صدر محمد یوسف خان،جنرل سیکرٹری محمد طاہر نصیر،سینئر نائب صدر اسرار احمد کے علاوہ دیگر عہدیداران بھی موجود تھے۔تقریب کے مہمان خصوصی ملک ابرار احمد نے نوجوان صحافیوں کی تنظیم کے قیام پر عہدیداروں سے حلف لیا اور انہیں مبارکباد دی ۔انہوں نے کہا ہے کہ نوجوان اس ملک کا سرمایہ ہیں اور انہیں کسی طرح بھی نطر انداز نہیں کیا جا سکتا۔انہوں نے کہا ہے کہ میں نوجوان صحافیوں کے اس اقدام کو سرہاتے ہوئے یقین دلاتا ہوں کے ینگ جرنلسٹ ایسوسی ایشن کو جب بھی ضرورت پڑی تو حاضر ہوں گا۔تقریب سے چکلالہ کینٹ بورڈ کے نائب صدر راجہ عرفان امتیاز نے کہا ہے کہ بڑی خوشی کی بات ہے کہ پڑھے لکھے اور عامل صحافی اس شعبے کی طرف قدم رکھ رہے ہیں۔انہوں نے کہا ہے کہ زرد صحافت اور بلیک میلنگ کی وجہ سے صحافت کے شعبہ کو کافی نقصان پہنچا ہے اور عامل صحافیوں کو بھی شک کی نظر سے دیکھا جاتاہے مگر ینگ جرنلسٹ ایسویسی ایشن کی تقریب میں شرکت کرنے پر احساس ہوا کہ اس شعبہ میں پڑھے لکھے نوجوان آگے آئیں گے تو صحافت کے شعبہ میں بہتری آئی گی جو ملکی ترقی کا باعث بنے گا۔اس موقع پر ینگ جرنلسٹ ایسویسی ایشن کے صدر محمد یوسف خان نے تنظیم کا منشور بیان کرتے ہوئے بتایا ہے کہ اس تنظیم کا مقصد صرف اور صرف پڑھے لکھے نوجوانوں کی فلاح و بہبود کے لئے کام کرنا ہے۔اس شعبہ میں نئے آنے والے نوجوانوں کے لئے ہر مہینے تربیتی ورکشاپ کا انعقاد کیا جائے گا جس میں صحافتی قوانین اور ضابطہ اخلاق کے بارے میں مکمل آگاہی فراہم کی جائے گی۔1951کے صحافتی ضابطہ اخلاق میں جونئیرصحافیوں کے حوالے سے ایک نقطہ شامل کیا گیا تھا کہ صحافی اپنے ماتحت یا جونئیر صحافی سے اچھا سلوک کرے جس کی وہ اپنے سینئر سے توقع کرتا ہے تاکہ صحافیوں کے دلوں میں ایک دوسرے کی عزت بڑھے مگر صحافتی اداروں میں نوجوانوں کو نظر انداز کیا جاتا ہے جس وجہ سے وہ خود اعتمادی کے فقدان کا شکار نظر آتے ہیں ایسے نوجوانوں کی حوصلہ افزائی کے لئے ایسوسی ایشن کی جانب سے بھرپور کردار ادا کیا جائے گا۔صحافی کو تصویری صحافت کے اصولوں پر سختی سے عملد رآمد کرنا چاہیے اور تصویروں کے حصول کے لئے فوٹوگرافرکو کوئی ایسا عمل نہیں کرنا چاہیے جو غیر اخلاقی ہو اور جس سے لوگوں کی نجی زندگی کا حق مجروح ہو یا کسی کی دل آزاری ہو۔ہمارے منشور میں ہے کہ صحافت میں اہم کردار ادا کرنے والے ویڈیوجرنلسٹ اور فوٹو جرنلسٹ کی عملی تربیت کے لئے ہر تین ماہ بعد خصوصی سیمنارز اور وکشاپ کا انعقاد کریں گے۔ینگ جرنلسٹ ایسوسی ایشن کسمپرسی کے شکار ضرورت مند صحافیوں کی مالی معاونت کے لئے ایک فنڈ کے قیام کا ارادہ بھی رکھتی ہے۔نوجوان صحافیوں کو علاج معالجے کی سہولت کے لئے سرکاری و نجی علاج گاہوں اور لیبارٹریوں سے معاہدے کئے جائیں گے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: